Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Mp3 Download & Lyrics – Ali Safdar 2022

Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Mp3 Download & Lyrics written in urdu and english text and recited by noha khuwan Ali Safdar in 2022. View Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Lyrics and download Ali Safdar noha in mp3 audio format on Khairilamal.

Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Mp3 Download

To download Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay, please click on below image.

Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Mp3 Download & Lyrics - Ali Safdar 2022

Mujhay Mairay Mola Ka Dar Chaiyay Lyrics

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہمیں گنھگار ُ عاصی ہوں بندہ تیرا
حملہ ور مجھ پہ ہیں میرے جرمُ خطا
اس گنھگار پہ رحم کر دے خدا
سر جھکائے ہوئے ہاتھ جوڑے ہوئے
ان گناھوں سے مجھ کو مَفَر چاھیےنہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

کیسے توبہ کروں کیسے مانگوں دعا
مجھ کو ملتا نہیں عذر کا راستہ
جو سلیقہ کیا تو نے حُر کو عطا
گمرہی پر ندامت ہے مجھ کو بہت
مثلِ حُر ہی مجھ کو وہ ہنر چاھییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

کوئی حاجت نہیں کوئی خواہش نہیں
آ سمان پر رہوں یا کہ زیرِ زمیں
میں تو ہوں حبّ ِ آ لِ نبی کا مکیں
دوش پر میرے پرچم ہے عباس کا
اور کیا مجھ کو رختِ سفر چاہییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

زندگی ہے زمانے میں بھٹکی ہوئی
ایک تلوار ہے سر پہ لٹکی ہوئی
خواہشوں میں ہر اک سانس اٹکی ہوئی
ہر طرح کی وبائیں ہیں گھیرے ہوئے
یا امامِ زماں۔ ع اک نظر چاھییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

خون اصغر کا دیتا ہوں میں واسطہ
بے خطا بھوکا پیاسا جو مارا گیا
جس کا خوں اپنے چہرے پہ شہ نے ملا
میرے کشکول کو اُسکا صدقہ ملے
حشر اپنا اُسی نام پر چاھییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

ہے خبیہِ محمد کی تجھکو قسم
جس کا سینے کی بر چھی سے نکلا ہے دم
جسکی میّت پہ روتے تھے اہلِ حَرَم
اُس حوالے سے سب ہیں
دُعائیں میری
ان دُعاؤں میں پیدا اثر چاھییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

آ ہُ زاری ہو ماتم ہو شبیر کا
راہِ حق میں ابد غم ہو شبیر کا
میری نظروں میں پر چم ہو شبیر کا
داغِ عصیاں مٹانا ہے اس کام سے
مستقل اشکِ غم میں سفر چاہییے

نہ دنیا نہ دولت نہ گھر چاھیے
مجھے میرے مولا کا در چاھیے
یَا وَجِیھاً عِندَاللّٰہ الشْفَع لَنَا عِندَاللّٰہ

Leave a Reply

Your email address will not be published.