Abbas Alam Tera Maqtal Sy Aa Raha Hai Lyrics Tejani Brothers Noha

Urdu Noha Abbas Alam Tera Maqtal Sy Aa Raha Hai Lyrics in English and Urdu recited by Tejani Brothers. Find out more noha lyrics by Tejani Brothers similar to lyrics of Abbas Alam Tera Maqtal Sy Aa Raha Hai on Khairilamal.

Abbas Alam Tera Maqtal Sy Aa Raha Hai Lyrics In English

Yeh Alam Hussainiat ki Pehchan hai karaata
yeh hi yazidiat ki hai farq ko batata
koi choomta hai aa kar,
koi jhula raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Jazba Ali ka tu nay is tarah sy dikhaya
laakhon k samnay tu nay is tarah sy dikhaya
Abbas apny khoon sy
Maqtal saja raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Bardasht kar na paaya bachon ki woh sadaayen
thi bas yehi tamanna khaimon mein paani laaye
mashkeeza bazoo’on kay, mashkeeza bazoo’on kay
badlay bacha raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Jaisay Alam gira tha, Wesay giri Sakina
Pani main zindagi bhai maangun gi ab kabhi naa
ab pani ka tasawur,
mujh ko rula raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

bazo to kat chukay hain, kaisay sambhal sakay ga
ghorhay kay zeen sy ab kis tarah sy giray ga
Abbas apny munh py
Raiti py aa raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Duniya nay nahi dekhi kabhi aisi wafadari
Bay Taigh larh kay jis ka sar sy hai khoon jaari
Shabbir kay liye wo
Bazoo kata raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Itni Ajeeb hai yeh Ghazi ki wafadari
Dariya ko Qabza kar kay Lab py na laya pani
Abbas Tum sy Baaqi
Naam e Wafa Raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Aankhen taras rahi hain poori karo ye haajat
hum ko bulao ghazi aa ky karain ziarat
hum door hain ye apnay
dil ko sata raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

kya martaba hai tera socho zara tejani
pani na laya lab par laikin abhi bhi pani
Ghazi tumharay pairon
ko dhoondhta raha hai
Abbas Alam Tera maqtal sy aa raha hai (2)

Abbas Alam Tera Maqtal Sy Aa Raha Hai Lyrics In Urdu

عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

یہ علم حسینیت کی پہچان ہے کراتا
یہ ہی یزیدیت کے ہے فرق کو بتاتا
کوی چومتا ہے آکر، کوی جھلا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

جذبہ علی کا تو نے اس طرح سے دکھایا
لاکھوں کے سامنے تو نے اس طرح سے دکھایا
عباس اپنے خوں سے مقتل سجا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

برداشت کر نہ پایا بچوں کی وہ صدائیں
تھی بس یہی تمنا خیموں میں پانی لاے
مشکیزہ بازووں کے بدلے بچا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

جیسے علم گرا تھا ویسے گری سکینہ
پانی میں زندگی بھر مانگوں گی اب کبھی نا
اب پانی کا تصور مجھ کو رلا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

بازو تو کٹ چکے ہیں کیسے سنبھل سکے گا
گھوڑے کی زیں سے اب کس طرح سے گرے گا
عباس اپنے منہ پہ ریتی پہ آ رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

دنیا نے نہیں دیکھی کبھی ایسی وفاداری
بے تیغ لڑ کے جس کا سر سے ہے خون جاری
شبیر کیلے وہ بازو کٹا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

اتنی عجیب ہے یہ غازی کی وفاداری
دریا کو قبضہ کر کے لب پہ نہ لایا پانی
عباس تم سے باقی نام وفا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

آنکھیں ترس رہی ہیں پوری کرو یہ حاجت
ہم کو بلاو غازی آ کے کریں زیارت
ہم دور ہیں یہ اپنے دل کو ستا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

کیا مرتبہ ہے تیرا سوچو ذرا تیجانی
پانی نہ لایا لب پر لیکن ابھی بھی پانی
غازی تمھارے پیروں کو ڈھونڈتا رہا ہے
عباس علم تیرا مقتل سے آ رہا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published.