Reciter: Syed Raza Abbas Zaidi

Qatal Alamdar Hogaya Lyrics In Urdu By Syed Raza Abbas Zaidi

Qatal Alamdar Hogaya Lyrics Urdu by Syed Raza Abbas Zaidi

ہائے
ہائے ہائے ہائے ہائے ہائے ہائے

زینب کی نظر فضہ پر
فضہ کی نظر حسین پر
حسین کی نظر علم پر

علم گرا ہائے حسین گر گئے
فضہ کی زینب گری

گونجی مقتل میں حسین کی صدا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

شیر جیسا بھائی تھا میرا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

ہم کو یہ غم ہے تم کو سہارا نہ دے سکے
ایسے تو کوئی بھی نہ گرا جیسے تم گرے
گھوڑے سے گرتے ہوئے ہم علمدار
بازو نہیں تھے تیرے ہائے علمدار
کس نے سنبھالا تجھے ہائے علمدار
چہرہ تیرا زخمی ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

سوچا نہیں تھا ایسے پکارو گے تم مجھے
ارمان تھا لحد میں اتارو گے تم مجھے
یاد ہے بچپن ہمیں ہائے علمدار
نازوں سے پالا تمہیں ہائے علمدار
آج میری گود میں ہائے علمدار
بھائی تیرا دم نکل گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

ڈوبا ہوا لہو میں وہ دیکھے گی جب علم
پیاسے سیکنہ کیسے سہے گی تمھارا غم
بیٹھی ہے اس آس پر ہائے علمدار
پانے چچا لائیں گے ہائے علمدار
کیسے بتاؤں اسے ہائے علمدار
مارے گئے نہر پہ چچا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

عباس تیری بہن تیرے غم میں روئیں گی
سوتی تھیں تیرے دم سے جو آنکھیں نہ سوئیں گی
بہنوں کو یہ مان تھا ہائے علمدار
زندہ ہے بھائی میرا ہائے علمدار
ڈھونڈیں گی چہرہ تیرا ہائے علمدار
مار دے گا ان کو غم تیرا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

ارے تم جانتے تھے ہم میں نہیں ہے یہ حوصلہ
لاشہ بھی اپنا تم نے اٹھانے نہیں دیا
اتنی اجازت تو دو ہائے علمدار
بازو اٹھا لوں تیرے ہائے علمدار
کیسے سمیٹوں تجھے ہا‎‎ئے علمدار
تو کہاں کہاں بکھر گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

اٹھتے ہوئے حسین سے اٹھا نہیں گیا
آؤ ہمیں سہارا دو اکبر سے یہ کہا
چھوڑ کے لاشہ اٹھے ہائے علمدار
خیموں کی جانب چلے ہائے علمدار
کہتے تھے سر پیٹ کے ہائے علمدار
دیکھ اے زمین کربلا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

خیموں میں آ کے شاہ نے زینب سے جب کہا
ڈھارس تھی جس کے دم سے وہ عباس مر گیا
سن کے یہ آہ و فغاں ہائے علمدار
کہنے لگیں بیبیاں ہائے علمدار
چھوڑ گئے تم کہاں ہائے علمدار
کون اب بچائے گا ردا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

غازی کی لاش لائے ہوں جیسے شاہ زمن
ایسے علم کو دیکھ کے لپٹی ہے ہر بہن
دیکھ کے اپنی ردا ہائے علمدار
بہنوں نے رو کر کہا ہائے علمدار
ہم سے جدا ہو گیا ہائے علمدار
بین تھے ذیشان اور رضا
ہائے ہم غریب ہو گئے

قتل علمدار ہو گیا
ہائے ہم غریب ہو گئے

Haye
Haye Haye Haye Haye Haye Haye

Zainab Ki Nazar Fizza Par
Fizza Ki Nazar Hussain Par
Hussain Ki Nazar Alam Par

Alam Gira Haye Hussain Gir Gaye
Fizza Ki Zainab Giri

Goonji Maqtal Mein Hussain Ki Sada
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Shair Jaisa Bhai Tha Mera
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Hum Ko Yeh Gham Hai Tum Ko Sahara Na Day Sakay
Aisay To Koi Bhi Na Gira Jaisay Tum Giray
Ghorhay Say Girtay Huye Haye Alamdar
Bazoo Nahi Thay Teray Haye Alamdar
Kis Nay Sambhala Tujhy Haye Alamdar
Chehra Tera Zakhmi Ho Gaya
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Socha Nahi Tha Aisay Pukaro Gay Tum Mujhay
Armaan Tha Lahad Mein Utaro Gay Tum Mujhay
Yaad Hai Bachpan Hamen Haye Alamdar
Naazon Sy Pala Tumhen Haye Alamdar
Aaj Meri Goud Mein Haye Alamdar
Bhai Tera Dum Nikal Gaya
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Dooba Hua Lahoo Mein Woh Dekhay Gi Jab Alam
Pyasi Sakeena Kaisay Sahay Gi Tumhara Ghum
Bethi Hai Is Aas Par Haye Alamdar
Pani Chacha Layen Gay Haye Alamdar
Kaisay Bataun Usay Haye Alamdar
Maray Gaye Nehr Py Chacha
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Abbas Teri Behn Teray Ghum Mein Royen Gi
Soti Thiin Teray Dum Say Jo Ankhen Na Soyen Gi
Behnon Ko Yeh Maan Tha Haye Alamdar
Zinda Hai Bhai Mera Haye Alamdar
Dhundhen Gi Chehra Tera Haye Alamdar
Maar Day Ga Un Ko Ghum Tera
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Ary Tum Jantay Thay Hum Mein Nahi Hai Yeh Hosla
Lasha Bhi Apna Tum Nay Uthanay Nahi Diya
Itni Ijazat To Day Haye Alamdar
Bazoo Utha Lun Tery Haye Alamdar
Kaisay Samaitun Tujhay Haye Alamdar
Tu Kahan Kahan Bikhar Gaya
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Uthtay Huye Hussain Say Utha Nahi Gaya
Aao Hamen Sahara Do Akbar Say Yeh Kaha
Chorh Ky Lasha Uthay Haye Alamadr
Khaimon Ki Janib Chalay Haye Alamdar
Kehtay Thay Sar Peet Kay Haye Alamdar
Dekh Ay Zameen E Karbala
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Khaimon Mein Aa Ky Shah Nay Zainab Sy Jab Kaha
Dharas Thi Jis Ky Dum Say Woh Abbas Mar Gaya
Sun Ky Yeh Aah O Fughan Haye Alamdar
Kehnay Lagi Bibiyan Haye Alamdar
Chorh Gaye Tum Kahan Haye Alamdar
Kon Ab Bachaye Ga Rida
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Ghazi Ki Lash Laye Hon Jaisay Shah E Zamann
Aisay Alam Ko Daikh Kay Lipti Thi Har Bahan
Dekh Ky Apni Rida Haye Alamdar
Behnon Nay Ro Kar Kaha Haye Alamdar
Hum Say Juda Ho Gaya Haye Alamdar
Bayn Thay Zeeshan Aur Raza
Haye Hum Ghareeb Ho Gaye

Qatal Alamdar Hogaya
Haye Hum Ghareeb Hogaye

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply