Reciter: Nadeem Sarwar

Shabbir Nahi Bhuley Lyrics In Urdu By Nadeem Sarwar

مجلس شبیر میں آتی ہے ماں شبیر کی
کہتی ہے کیا اے مومنو تم سے یہ ماں روتی ہوئی
زخمی ہے میرا لاڈلا مرحم مجھے دے دو کوئی
مرحم تو ہے اشک عزا رومال میں لے جاؤں گی

ان آنسوؤں نے بھر ديے سب زخم تو دل گیر کے
دو گھاؤ ایسے ہیں مگر بھرتے نہیں شبیر کے

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا
ماتم کرو گھر لٹ گیا شبیر کا
ماں آ گئی شبیر کی ماتم کرو شبیر کا
خنجر تلے نیزے پہ بھی کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

تیروں پہ تھا لاشہ تیرا روتی رہی کربوبلا
خیمے کا جب پردہ اٹھا بولی بہن بھیا میرا
لاشہ تڑپ کر رہ گیا کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

صغرا ادھر روتی رہی مولا ادھر روتے رہے
وہاں منتظر بیمار تھی یہان قتل سب ہوتے رہے
صحرا میں گھر لٹتا رہا کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

لپٹی سم اسبات تھی وہ لاڈلی بیٹی تیری
معلوم تھا مولا تجھے اب نہ ملے گی یہ کبھی
پھر بھی سوئے مقتل گئے کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

مارا کیا غازی ترا پھر بھی کہا شکر خدا
قاسم گیا اصغر گیا پھر بھی کہا شکر خدا
ہر لاش پر آتے رہے کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

دربار میں بازار میں زندان میں ہر آن میں
کیسے ستم سہتی رہی بیٹی تیری بہنا تیری
دیکھا کئے نیزے سے سب کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

نیزے پہ بھی سر ہے تیر پھر بھی تیری کیا شان ہے
یہ سر ہے اے مولا تیرا یا بولتا قرآن ہے
تن سے جدا سر ہو گیا کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

ریحان اور سرور کرو مجلس بپا شبیر کی
اکبر کا غم ‌زینب کا غم معراج ہے تحریر کی
مولا عزا کے فرش پر کرتے رہے شکر خدا

نہ بھولے نہ بھولے شبیر نہیں بھولے

اک چادر زینب کی اک سینہ اکبر کا

Majlis E Shabbir Mein Ati Hai Maan Shabbir Ki
Kehti Hai Kya Ay Momino Tum Sy Yeh Maan Roti Hui
Zakhmi Hai Mera Ladla Marham Mujhy Dy Do Koi
Marham To Hai Ashk E Aza Roomal Mein Ly Jaun Gi

In Ansoon Ny Bhar Diye Sab Zakhm To Dilgeer Ky
Do Ghao Aisy Hain Magar Bharty Nahi Shabbir Ky

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka
Matam Karo Ghar Lut Gaya Shabbir Ka
Maan Aa Gai Shabbir Ki Matam Karo Shabbir Ka
Khanjar Taly Naizey Py Bhi Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Teeron Py Tha Lasha Tera Roti Rahi Karbobala
Khaimy Ka Jab Parda Utha Boli Behan Bhaiya Mera
Lasha Tarhap Kar Reh Gaya Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Sughra Udhar Roti Rahi Maula Idhar Roty Rahy
Wahan Muntazir Beemar Thi Yahan Qatl Sab Hoty Rahy
Sehra Mein Ghar Lut’ta Raha Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Lipti Sume Asbat Thi Woh Ladli Beti Teri
Maloom Tha Maula Tujhy Ab Na Mily Gi Yeh Kabhi
Phir Bhi Sooye Maqtal Gaye Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Mara Gya Ghazi Tera Phir Bhi Kaha Shukr E Khuda
Qasim Gya Asghar Gya Phir Bhi Kaha Shukr E Khuda
Har Lash Par Aty Rahy Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Darbar Mein Bazar Mein Zindan Mein Har Aan Mein
Kaisy Sitam Sehti Rahi Beti Teri Behna Teri
Dekha Kiye Naizey Sy Sab Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Naizey Py Bhi Sar Hai Tera Phir Bhi Teri Kya Shan Hai
Yeh Sar Hai Ay Maula Tera Ya Bolta Quran Hai
Tan Sy Juda Sar Ho Gya Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Rehan Aur Sarwar Karo Majlis Bapa Shabbir Ki
Akbar Ka Gham Zainab Ka Gham Mairaj Hai Tehreer Ki
Maula Aza Ky Farsh Par Karty Rahy Shukr E Khuda

Na Bhuley Na Bhooly Shabbir Nahi Bhuley

Ek Chadar Zainab Ki Ek Seena Akbar Ka

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply