Reciter: Mir Hasan Mir

Ya Muhammad Lyrics In Urdu By Mir Hasan Mir

یا محمد یا محمد یا محمد یا محمد

ایسی عزت آپ نے پائی کہ بس
یا محمد
کی شب اسرا خدا نے وہ پذیرائی کہ بس
یا محمد

ایک پل میں مصطفی کو عرش پر بلوا لیا
ایک پل میں مصطفی کو اپنے گھر بلوا لیا
اپنے بندے کی خدا کو ایسی یاد آئی کہ بس

گنتے گنتے تھک گئیں تاروں کی نازک انگلیاں
مصطفی کے ہیں زمیں پر اتنے شیدائی کہ بس
یا محمد

میں نے جلتی دھوپ میں جب چھیڑ دی نعت رسول
رحمتوں کی ہر طرف ایسی گھٹا چھائی کہ بس
یا محمد

دیکھ اب بھی وقت ہے دامن نبی کا تھام لے
ورنہ کل محشر میں ہو گی ایسی رسوائی کہ بس
یا محمد

ایک دن میں لکھنے بیٹھا تھا شب ہجرت کا حال
کیا کہوں یارو مجھے بھی ایسی نیند آئی کہ بس
یا محمد

ان فرشتوں نے ابھی پوچھا ہی کیا تھا اے سروش
دفعتا میرے سرہانے سے صدا آئی کہ بس
یا محمد

Ya Muhammad Ya Muhammad Ya Muhammad Ya Muhammad

Aisi Izzat Aap Ny Pai Ky Bas
Ya Muhammad
Ki Shab E Asra Khuda Ny Woh Pazeerai Ky Bas
Ya Muhammad

Aik Pal Mein Mustafa Ko Arsh Par Bulwa Liya
Aik Pal Mein Mustafa Ko Apny Ghar Bulwa Liya
Apny Bandy Ki Khuda Ko Aisi Yad Aai Ky Bas

Ginty Ginty Thak Gaiin Taron Ki Nazuk Unglian
Mustafa Ky Hain Zameen Par Itny Shaidai Ky Bas
Ya Muhammad

Mainy Jalti Dhoop Mein Jab Chairh Di Naat E Rasool
Rehmaton Ki Har Taraf Aisi Ghata Chai Ky Bas
Ya Muhammad

Dekh Ab Bhi Waqt Hai Daman Nabi Ka Tham Ly
Warna Kal Mehshar Mein Ho Gi Aisi Ruswai Ky Bas
Ya Muhammad

Aik Din Main Likhny Betha Tha Shab E Hijrat Ka Haal
Kya Kahun Yaro Mujhy Bhi Aisi Neend Aai Ky Bas
Ya Muhammad

Un Farishton Ny Abhi Poocha Hi Kya Tha Ay Sarosh
Dafa’tan Mery Sirhany Sy Sada Aai Ky Bas
Ya Muhammad

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply