Ay Baba Dekhty Rehna Lyrics Shadman Raza Noha

Ay Baba Dekhty Rehna Lyrics in English and Urdu recited by Shadman Raza. Find out more noha lyrics by Shadman Raza similar to lyrics of Ay Baba Dekhty Rehna on Khairilamal.

Ay Baba Dekhty Rehna Noha Lyrics In English

Haye baba! Pyaray Baba!
Sakina kehti jati thi Sar-e-Shabbir say ro ro kar
Aray bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht e naaka par

Ay Baba! dekhtay rehna Aye Baba! dekhty rehna

Aye Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhty rehna!

Khuda kay wastay rakhna nazar mujh par meray Baba
Na janay kiun satata hai yeh mujh ko dar meray Baba
Kahin aisa na ho kay raah mein mar jaon main gir kar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Aye Baba dekhtay rehna!

Meray nazdeek say shimr-e-sitamgar jab guzarta hai
Yateemi par khuda janay meri kiun tanz karta hai
Kahin aisa na ho rakh day guloo-e-khushk par khanjar

Ay Baba! dekhty rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Reham khaya na meri kum sinii par baani -e-shar nay
Shutar ki pusht say bandha hai ay Baba sitam gar nay
Main sar sy paon tak orhay huye hoon zakhmon ki chadar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Meri ankhon kay aagay aap ka chehra rahay Baba
Mujhay deedar doran-e-safar hota rahay Baba
Har ek sadma sahaa kar loon gi lekin mujh ko murh murh kar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Main saabir baap ki beti hoon duniya ko bataun gi
Mujhay jis haal mein lay jayen gay aada main jaon gi
Na aaye ga kisi bhi morh par shikwa meray lab par

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Chcha abbas ka sar kiun nazar aata nahi mujh ko
Main kub sy dhundti hon par nazar aata nahi mujh ko
Thehar jaye to batlana sar-e-naiza chcha ka sar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Meri qismat nay ay Baba yeh kaisay din dikhaye hain
Khuda janay kay ab tak kitnay pathar main nay khaye hain
Main roti hoon to ghurbat par meri hanstay hain ahl-e-shar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Laga rakhi hai ay Baba meray ronay pay pabandi
Bata sakti nahi jo kaifiat is waqt hai meri
Musalsal kha rahi hoon pusht par korhay kabhi pathar

Ay Baba! dekhtay rehna
Bithata hai mujhay shimr-e-sitamgar pusht-e-naka par
Ay Baba dekhtay rehna!

Karun main dastaan-e-ranj-o-ghum Asif baya kaisay
Sunaye ahl-e-emaan ko sakina ki fughan kaisay
Sadaa yeh aaj bhi ay Shadman aat hai reh reh kar

Ay Baba Dekhty Rehna Noha Lyrics In Urdu

ہاے بابا! پیارے بابا
سکینہ کہتی جاتی تھی سر شبیر سے رو رو کر
ارے بٹھاتا ہے مجھے شمر ستم گر پشت ناقہ پر

اے بابا دیکھتے رہنا
اے بابا دیکھتے رہنا

خدا کے واسطے رکھنا نظر مجھ پر میرے بابا
نہ جانے کیوں ستاتا ہے یہ مجھ کو ڈر میرے بابا
کہیں ایسا نہ ہو کہ راہ میں مر جاوں میں گر کر
اے بابا دیکھتے رہنا

میرے نزدیک سے شمر ستم گر جب گزرتا ہے
یتیمی پر خدا جانے میری کیوں طنز کرتا ہے
کہیں ایسا نہ ہو رکھ دے گلوے خشک پر خنجر
اے بابا دیکھتے رہنا

رحم کھایا نہ میری کم سنی پر بانی شر نے
شتر کی پشت سے باندھا ہے اے بابا ستم گر نے
میں سر سے پاوں تک اوڑھے ہوے ہوں زخموں کی چادر
اے بابا دیکھتے رہنا

میری آنکھوں کے آگے آپ کا چہرہ رہے بابا
مجھے دیدار دوران سفر ہوتا رہے بابا
ہر اک صدمہ سہہ کر لوں گی لیکن مجھ کو مڑ مڑ کر
اے بابا دیکھتے رہنا

میں صابر باپ کی بیٹی ہوں دنیا کو بتاوں گی
مجھے جس حال میں لے جائیں گے اعدا، میں جاوں گی
نہ آے گا کسی بھی موڑ پر شکوہ میرے لب پر
اے بابا دیکھتے رہنا

چچا عباس کا سر کیوں نظر آتا نہیں مجھ کو
میں کب سے ڈھونڈتی ہوں پر نظر آتا نہیں مجھ کو
ٹھہر جاے تو بتلانا سر نیزہ چچا کا سر
اے بابا دیکھتے رہنا

میری قسمت نے اے بابا یہ کیسے دن دکھاے ہیں
خدا جانے کہ اب تک کتنے پتھر میں نے کھاے ہیں
میں روتی ہوں تو غربت پر میری ہنستے ہیں اہل شر
اے بابا دیکھتے رہنا

لگا رکھی ہے اے بابا میرے رونے پہ پابندی
بتا سکتی نہیں جو کیفیت اس وقت ہے میری
مسلسل کھا رہی ہوں پشت پر کوڑے کبھی پتھر
اے بابا دیکھتے رہنا

کروں میں داستان رنج و غم آصف بیاں کیسے
سناے اہل ایماں کو سکینہ کی فغاں کیسے
صدا یہ آج بھی اے شادماں آتی ہے رہ رہ کر

اے بابا دیکھتے رہنا

Leave a Reply

Your email address will not be published.