Reciter: Sibte Jafar Zaidi

Jab Imam Ayen Gy Lyrics In Urdu By Sibte Jafar Zaidi

حال ہم سنائیں گے جب امام آئیں گے
زخم دل دکھائیں گے جب امام آئیں گے
محفلیں جمائیں گے جب امام آئیں گے
بام و در سجائیں گے جب امام آئیں گے
جشن ہم منائیں گے
جشن ہم منائیں گے جب امام آئیں گے

زخم ہیں ابھی تازہ مکہ اور مدینہ کے
شام و کوفہ کربوبلا ہم بھلا نہیں سکتے
از سقیفہ تائیں دم غیر سے نہیں پہنچے
جتنے دکھ اٹھائے ہیں ہم نے کلمہ گویوں سے
ایک اک چکائیں گے
ایک اک چکائیں گے جب امام آئیں گے

شک ہے جن کو اللہ کے عدل اور عدالت پر
منسب نبوت پر سیدہ کی عصمت پر
مرتضی کی احمد سے متصل نیابت پر
جن کو شک ہے بارہ پر بارہویں کی غیبت پر
سب ہی مار کھائیں گے
سب ہی مار کھائیں گے جب امام آئیں گے

نام پر صحابہ کے کام ظالموں جیسے
نام پر صحابہ کے کام کافروں جیسے
نام پر صحابہ کے کام منکروں جیسے
نام پر صحابہ کے کام مشرکوں جیسے
سب ہی منہ چرائیں گے
سب ہی منہ چرائیں گے جب امام آئیں گے

مرحلہ قیامت کا ہے ظہور پر موقوف
انسداد جور و جفا ہے ظہور پو موقوف
انتقام کربوبلا ہے ظہور پر موقوف
اہتمام روز جزا ہے ظہور پر موقوف
ہم سکون پائیں گے
ہم سکون پائیں گے جب امام آئیں گے

یہ ہمارے مکر و ریا شاطرانہ عیاری
کیا ہمارے صوم و صلوۃ اور یہ عزاداری
کتنا ہے خلوص ان میں کس قدر ریاکاری
کیا امام کی خاطر ہم نے کی ہے تیاری
کیسے منہ دکھائیں گے
کیسے منہ دکھائیں گے جب امام آئیں گے

دعوی محبت جو صبح و شام کرتے ہیں
ان کے دشمنوں سے بھی راہ و رسم رکھتے ہیں
خمس بھی نہیں دیتے غیبتیں بھی کرتے ہیں
مومنوں سے بھی دل میں ہی بغض و کینہ رکھتے ہیں
کس طرح نبھائیں گے
کس طرح نبھائیں گے جب امام آئیں گے

جھوٹ بولنے کو ہم مشغلہ سمجھتے ہیں
بات بات پر بے جا مصلحت برتتے ہیں
اور منافقت کو بھی مصلحت سمجھتے ہیں
لہو و لعب کے ساماں ہم گھروں میں رکھتے ہیں
کس طرح چھپائیں گے
کس طرح چھپائيں گے جب امام آئیں گے

نعمت شریعت کو بوجھ ہی سمجھتے ہیں
لہو و لعب ہی کو ہم زندگی سمجھتے ہیں
صاحبان زر کو بڑا آدمی سمجھتے ہیں
تنگ دست مومن کو بس یوں ہی سمجھتے ہیں
کیا مقام پائیں گے
کیا مقام پائیں گے جب امام آئیں گے

اپنے ذاتی دشمن کو دوزخی سمجھتے ہیں
اپنے آپ کو لیکن جنتی سمجھتے ہیں
امر اور نہی کو بس واجبی سمجھتے ہیں
دل فریب باتوں کو شاعری سمجھتے ہیں
بات کیا بنائیں گے
بات کیا بنائیں گے جب امام آئیں گے

زہر نو اماموں کو اشقیا نے دلوایا
اور گرایا دروازہ سیدہ پہ جلتا ہوا
مرتضی سے مولا کو بھی شہید کروایا
آل مصطفی کو کیا مبتلائے کربوبلا
کیا سزا نہ پائیں گے
کیا سزا نہ پائيں گے جب امام آئيں گے

العجل جو کہتے ہیں آ گئے تو کیا ہو گا
کیا ہے اپنی تیاری پیش ہم کریں گے کیا
سبط جعفر اپنا تو کل یہی ہے سرمایہ
سوز و حمد و نعت و سلام اور منقبت نوحہ
ہم یہی سنائیں گے
ہم یہی سنائیں گے جب امام آئیں گے

Hal Hum Sunayen Gay Jab Imam Ayen Gay
Zakhm E Dill Dikhayen Gay Jab Imam Ayen Gay
Mehiflen Jamayen Gay Jab Imam Ayen Gay
Baam O Darr Sajayen Gay Jab Imam Ayen Gay
Jashan Hum Manayen Gay
Jashan Hum Manayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Zakhm Hain Abhi Taza Makka Aur Madinay Kay
Sham O Koofa Karbobala Hum Bhula Nahi Saktay
Az Saqeefa Taeen Dum Ghair Say Nahi Pahunchay
Jitnay Dukh Uthaye Hain Hum Nay Kalma Goyon Say
Aik Ek Chukayen Gay
Aik Ek Chukayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Shak Hai Jin Ko Allah Kay Adal Aur Adalat Par
Mansab E Nabuwat Par Sayeda Ki Ismat Par
Murtaza Ki Ahmed Say Muttasil Niyabat Par
Jin Ko Shak Hai Barah Par Barahwen Ki Ghaibat Par
Sab Hi Mar Khayen Gay
Sab Hi Mar Khayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Naam Par Sahaba Kay Kaam Zalimon Jaisay
Naam Par Sahaba Say Kaam Kafiron Jaisay
Naam Par Sahaba Kay Kaam Munkiron Jaisay
Naam Par Sahaba Kay Kaam Mushrikon Jaisay
Sab Hi Munh Churayen Gay
Sab Hi Munh Churayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Marhala Qayamat Ka Hai Zahoor Par Moqoof
Insadaad E Jor O Jafa Hai Zahoor Par Maokoof
Inteqam E Karbobala Hai Zahoor Par Maokoof
Ehtamam E Roz E Jafa Hai Zahoor Par Maokoof
Hum Sukoon Payen Gay
Hum Sukoon Payen Gay Jab Imam Ayen Gay

Yeh Hamaray Makr O Ryaa Shitarana Ayyaari
Kya Hamaray Saom O Salat Aur Yeh Azadari
Kitna Hai Khuloos In Mein Kis Qadar Riyakaari
Kya Imam Ki Khatir Hum Nay Ki Hai Tayyaari
Kaisay Munh Dikhayen Gay
Kaisay Munh Dikhayen Gay Jab Imam Ayenge

Dahwa E Muhabbat Jo Subh O Sham Kartay Hain
Un Kay Dushmanon Say Bhi Raah O Rasm Rakhtay Hain
Khums Bhi Nahi Detay Gheebaten Bhi Kartay Hain
Mominon Say Bhi Dill Mein Bughz O Keena Rakhtay Hain
Kis Tarah Nibhayen Gay
Kis Tarah Nibhayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Jhoot Bolnay Ko Hum Mashghala Samajhtay Hain
Baat Baat Par Bey Jaa Maslihat Barat’Tay Hain
Aur Munafiqat Ko Bhi Maslihat Samajhtay Hain
Lahw O La’Ab Kay Samaan Hum Gharon Mein Rakhtay Hain
Kis Tarah Chupayen Gay
Kis Tarah Chupayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Neymat E Shariyat Ko Bojh Hi Samajhtay Hain
Lahw O La’Ab Hi Ko Hum Zindagi Samajhtay Hain
Sahiban E Zar Ko Barha Aadmi Samajhtay Hain
Tang Dast Momin Ko Bas Yun Hi Samajhtay Hain
Kya Maqam Payen Gay
Kya Maqam Payen Gay Jab Imam Ayen Gay

Apnay Zaati Dushman Ko Dozakhi Samajhtay Hain
Apnay Aap Ko Lekin Jannati Samajhtay Hain
Amar Aur Nahi Ko Bas Wajabi Samajhtay Hain
Dill Faraib Baton Ko Shayeri Samajhtay Hain
Baat Kya Banayen Gay
Baat Kya Banayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Zehr No Imamon Ko Ashqiya Nay Dilwaya
Aur Giraya Darwaza Sayeda Pay Jalta Hua
Murtaza Say Mola Ko Bhi Shaheed Karwaya
Aal E Mustafa Ko Kiya Mubtalaye Karbobala
Kya Saza Na Payen Gay
Kya Saza Na Payen Gay Jab Imam Ayen Gay

Al Ajal Jo Kehtay Hain Aa Gaye To Kya Ho Ga
Kya Hai Apni Tayyaari Paish Hum Karen Gay Kya
Sibt E Jafar Apna To Kull Yehi Hai Sarmaya
Soz O Hamd O Naat O Salaam Aur Manqabat Noha
Hum Yehi Sunayen Gay
Hum Yehi Sunayen Gay Jab Imam Ayen Gay

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply