Reciter: Nadeem Sarwar

Kya Andhera Hai Lyrics In Urdu By Nadeem Sarwar

Kya Andhera Hai Lyrics Urdu by Nadeem Sarwar

ہائے

اے پھوپھی اماں

اے پھوپھی اماں میری
کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

اک شمع منگوائيے کہ ہو اجالا اے پھوپھی
کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

گود میں اپنے چھپا لو دل دھڑکتا ہے میرا
ہر گھڑی لگتا ہے جیسے شمر پھر سے آ گیا
پاس سے میرے نہیں جانا خدارا اے پھوپھی

کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

خوف آتا ہے پھوپھی دن کے اجالے میں یہاں
وحشتیں ہی وحشتیں ہیں قید خانے میں یہاں
ایک پل لگتا نہیں ہے دل ہمارا اے پھوپھی

کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

اب کہاں بابا کا سینہ چین کی راتیں کہاں
اب کہاں وہ دن رہے وہ پیار کی باتیں کہاں
آئیں گے کب لوٹ کے وہ دن دوبارہ اے پھوپھی

کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

ہاں ابھی کچھ دیر پہلے مجھ کو نیند آئی تو تھی
چند لمحوں بعد پھر سے آنکھ میری کھل گئی
یوں لگا جیسے ہو بابا نے پکارا اے پھوپھی

کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

آئیں بابا تو سناؤں میں ستم کی داستاں
میں دکھاؤں گی رسن کے اور تمانچوں کے نشاں
سن نہیں پائیں گے بابا حال سارا اے پھوپھی

کیا اندھیرا ہے پھوپھی
قید خانے میں سکینہ کا تھا نوحہ اے پھوپھی

Haye

Ay Phuphi Amman

Ay Phuphi Amman Meri
Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Ek Shama Mangwaiye Ky Ho Ujala Ho Phuphi
Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Qoad Mein Apni Chupa Lo Dil Dharhakta Hai Mera
Har Gharhi Lagta Hai Jaisy Shimr Phir Sy Aa Gya
Paas Sy Mery Nahi Jana Khudara Ay Phuphi

Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Khaof Ata Hai Phuphi Din Ky Ujaly Mein Yahan
Wehshaten Hi Wehshaten Hain Qaid Khany Mein Yahan
Aik Pal Lagta Nahi Hai Dil Hamara Ay Phuphi

Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Ab Kahan Baba Ka Seena Chain Ki Raaten Kahan
Ab Kahan Woh Din Rahy, Woh Pyar Ki Baten Kahan
Aayen Gy Kab Laot Ky Woh Din Dobara Ay Phuphi

Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Han Abhi Kuch Dair Pehly Mujh Ko Neend Aai To Thi
Chand Lamhon Baad Phir Sy Aankh Meri Khul Gai
Yun Laga Jaisy Ho Baba Ny Pukara Ay Phuphi

Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Aayen Baba To Sunaun Main Sitam Ki Dastaan
Main Dikhaun Gi Rasan Ky Aur Tamanchon Ky Nishan
Sun Nahi Payen Gy Baba Haal Sara Ay Phuphi

Kya Andhera Hai Phuphi
Qaid Khany Mein Sakina Ka Tha Noha Ay Phuphi

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

This Post Has 2 Comments

  1. Danish sofi

    Good work 👏 .

  2. Fatima

    Hey , I just wanted to clarify that this noha is written by sachay Bhai not Nadeem sarwar.

Leave a Reply