Reciter: Ahmed Raza Nasiri

Nahi Dam Torna Lyrics In Urdu By Ahmed Raza Nasiri

ہائے

جانب مقتل چلے شہہ خاک اڑاتے خاک پر
دل پکڑ کر اور کبھی تھامے ہوئے اپنا جگر
گر کے اٹھتے اٹھ کے گرتے کرر ہے ہیں یہ سفر
کہہ رہے ہیں آ رہا ہوں اے میرے نور نظر

آ رہا ہوں گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

اے میرے دلبر علی اکبر

اے میرے دلبر علی اکبر نہیں دم توڑنا

آ رہا ہوں گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

بس ذدا سی دیر بیٹا میں ابھی آ جاؤں گا
تھام کر برچھی کا پھل ناد علی دہراؤں گا
التجا کرتے ہیں یہ سرور
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

لڑکھڑا کر ہی سہی میں آ رہ تھا بخدا
گر گیا میں جب مجھے زینب کی آئی یہ صدا
بچ نہ پائے گی میری چادر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

سندر خیمہ سے یہ آواز آئی ہے ابھی
تو نے دم توڑا تو تیری ماں نہیں جی پائے گی
کہہ رہی ہے یہ تیری مادر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

جو سناں تم کو لگی ہے اس کا مجھ کو درد ہے
جب میں آؤں دیکھنا تم میرا چہرہ ذرد ہے
اور نہ کرنا مجھے مضطر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

تیری ماں بہنوں کے سر سےچھینی جائے گی ردا
پھر انہیں راہوں میں لے کر آئیں کے یہ اشقیا
گر ہے نا منظور یہ منظر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

لوٹ کے آؤں گا تم صغرا سے کہہ کر آئے تھے
اس کا خط آنے کو ہے میں کیا بتاؤں گا اسے
مر ہی جائے گی تری خواہر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

آخری ہچکی لگی اور پھر یہ دنیا چھوڑ کر
ہو گئے خاموش اکبر دشت میں دم توڑ کر
پھر بھی شہہ کہتے رہے رو کر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

باپ کو کیسے یقیں آئے گا بیٹا نہ رہا
اس لئے میت اٹھا کر بھی یہ سرور نے کہا
میری جاں ہم شکل پیغمبر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

تم مقام حضرت اکبر پہ یاسر جاؤ تو
کربلا میں یہ صدا ہے آج بھی جا کر سنو
اک پدر اب بھی ہے نوحہ گر
نہیں دم توڑنا

آ رہا ہے گھٹنیوں چل کر نہیں دم توڑنا

Haye

Janib E Maqtal Chalay Sheh Khak Urhatay Khak Par
Dil Pakarh Kar Aur Kabhi Thamay Huye Apna Jigar
Gir Ky Uthtay Uth Kay Girtay Kar Rahay Hain Yeh Safar
Keh Rahay Hain Aa Raha Hun Ay Meray Noor E Nazar

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Ay Meray Dilbar Ali Akbar

Ay Mereay Dilbar Ali Akbar Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Bas Zara Si Dair Beta Main Abhi Aa Jaun Ga
Tham Kar Barchi Ka Phal Nad E Ali Dohraun Ga
Iltija Kartay Hain Yeh Sarwar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Larhkharha Kar Hi Sahi Main Aa Raha Tha Bakhuda
Gir Gaya Main Jab Mujhay Zainab Ki Ai Yeh Sada
Bach Na Paye Gi Meri Chadar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Sundar E Khaima Say Yeh Awaz Aai Hai Abhi
Tu Nay Dam Torha To Teri Maan Nahi Jee Paye Gi
Keh Rahi Hai Yeh Teri Madar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Jo Sinaan Tum Ko Lagi Hai Us Ka Mujh Ko Dard Hai
Jab Main Aaun Dekhna Tum Mera Chehra Zard Hai
Aur Na Karna Mujhay Muztar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Teri Maan Behnon Kay Sar Say Cheeni Jaye Gi Rida
Phir Unhen Raahon Mein Ley Kar Aayen Gay Yeh Ashqiya
Gar Hai Naa Manzoor Yeh Manzar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Laot Kay Aun Ga Tum Sughra Say Keh Kar Aye Thay
Us Ka Khat Anay Ko Hai Main Kya Bataun Ga Usay
Mar Hi Jaye Gi Teri Khuahar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Akhri Hichki Lagi Aur Phir Yeh Duniya Chorh Kar
Ho Gaye Khamosh Akbar Dasht Mein Dam Torh Kar
Phir Bhi Sheh Kehtay Rahay Ro Kar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Baap Ko Kaisay Yaqeen Aye Ga Beta Na Raha
Is Liye Maiyat Utha Kar Bhi Yeh Sarwar Nay Kaha
Meri Jaan Ham Shakal E Payghambar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Tum Maqam E Hazrat E Akbar Pay Yasir Jao To
Karbala Mein Yeh Sada Hai Aaj Bhi Jaa Kar Suno
Ek Pidar Ab Bhi Hai Noha Gar
Nahi Dam Torna

Aa Raha Hun Ghutniyon Chal Kar Nahi Dam Torna

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply