Reciter: Mir Hasan Mir

Riwayyat E Mukhtar Lyrics In Urdu By Mir Hasan Mir

ہائے اے رونے والوں
ہے یہ رواجات میں لکھا
جس دم قیام ذکوفے میں مختار نے کیا
جو بھی تھے قتلعنِ شہیدانِ کربلا
حکمِ امیر پر وہ ستم جب سناتا تھا
مختار سر کو پیٹ کر بس روتا جاتا تھا

اک روز تھا یہ کوفے کے دربار کا سماء
ابنِ نمیر اپنے ستم کرتا تھا بیاں

توڑی تھی میں نے سینہِ اکبر میں خود سینا
اُٹھا تھا شور خیموں سے مارا گیا جواں

ماں جیتے جی گزر گئی زینب بھی مر گئی
اک برجھی میری کتنے جگر پار کر گئی

اک روز کر کے لایا گیا حرملا اسیر
بولا وہ رن میں میں نے چلائے تین تیر

اُس وقت پہلا تیر چلایا تھا اے امیر
بھر کے چلا جو مشک کو مظلوم کا سفیر

مشکیزے سے جو تیر میرا پار ہو گیا
ایسا لگا کے قتل علمدار ہو گیا

بولا لعین یہ کرب کا ہے دوسرا مقام
لائے جو اپنی گود میں بے شیر کو امام

سوکھی زبان پھرتا تھا ہونٹوں پہ تشنہ گام
یوں قطع ابنِ زھرا کا کیا میں نے کلام

ہل ہل گیا لحد میں جگر ابو تراب کا
مقتل میں نحر ہو گیا بچہ رباب کا

دربار میں یہ سن کر قیامت کا تھا ساماں
پیرو جواں روتے تھے لے لے کہ ہچکیاں

بولا تھا ہرملا ابھی باقی ہے داستاں
جس دم تھا تیرا حُسین تیروں کے درمیاں

وہ تیر آخری تھا جو میں نے چلایا تھا
اُس تیر نے حُسین کو زین سےگرایا تھا

پھر شور واہ حُسین کا اُٹھا تھا بار بار
جب قید کر کے لایا گیا شمرِ بعد سحر

بولا وہ میرے ہاتھ میں خنجر تھا تیز دھار
جس سے کیے حُسین کی گردن پہ تیرہ وار

خنجر رواں تھا ہلق پہ ابنِ بتول کے
دل کٹ رہے تھے ساتھ میں اہلِ رسول کے

اب اس کے بعد میر تکلم بیاں ہو کیا
اے پرسہ داروں سوچنادل میں کبھی زرا

کیوں اتنا وقت قتلِ شبیر کو گا
کس واسطے حُسین کا کٹتا نہ تھا گلا

محشر میں یہ کھلے گا ستم کائنات پر
خنجر کے کچھ نشان ہیں زہرا کے ہاتھ پر

Haye Ay Rony Walo
Hai Yeh Riwayaat Mein Likha
Jis Dam Qayam Koofy Mein Mukhtar Ny Kiya
Jo Bhi Thy Qatilan E Shaheedan E Karbala
Un Mein Sy Koi Jab Bhi Giraftar Hota Tha
Hukam E Ameer Par Woh Sitam Jab Sunata Tha
Mukhtar Sar Ko Peet Ky Bas Rota Jata Tha

Ek Roz Tha Yeh Koofy Ky Darbar Ka Samaan
Ibne Numair Apny Sitam Karta Tha Bayaan

Tori Thi Mainy Seena E Akbar Mein Khud Sinaan
Uthta Tha Shor Khaimon Sy Mara Gaya Jawaan

Maan Jeety Jee Guzar Gai Zainab Bhi Mar Gai
Ek Barchi Meri Kitny Jigar Paar Kar Gai

Ek Roz Kar Ky Laya Gaya Hurmala Aseer
Bola Woh Ran Mein Main Ny Chalaye Thy Teen Teer

Us Waqt Pehla Teer Chalaya Tha Ay Ameer
Bhar Kar Chala Jo Mashk Ko Mazloom Ka Safeer

Mashkeezy Sy Jo Teer Mera Paar Ho Gaya
Aisa Laga Keh Qatal Alamdar Ho Gaya

Bola Laeen Yeh Karb Ka Hai Doosra Maqam
Laye Jo Apni Goud Mein Bey Sheer Ko Imam

Sookhi Zuban Phirata Tha Honton Py Tishna Gaam
Yun Qat’aa Ibne Zahra Ka Mainy Kiya Kalaam

Hil Hil Gaya Lahad Mein Jigar Bu Turab Ka
Maqtal Mein Nehr Ho Gaya Bacha Rubab Ka

Darbar Mein Yeh Sun Ky Qayamat Ka Tha Samaan
Peer O Jawan Roty Thy Ly Ly Ky Hichkian

Bola Yeh Hurmala Abhi Baqi Hai Dastaan
Jis Dam Tera Hussain Tha Teeron Ky Darmian

Woh Teer Akhri Tha Jo Mainy Chalaya Tha
Us Teer Ny Hussain Ko Zeen Sy Giraya Tha

Phir Shor Wa Hussaina Ka Uthta Tha Bar Bar
Jab Qaid Kar Ky Laya Gaya Shimr E Bad Sha’aar

Bola Woh Mery Hath Mein Khanjar Tha Taiz Dhaar
Jis Sy Kiye Hussain Ki Gardan Py Tera Waar

Khanjar Rawaan Tha Halq Py Ibne Batool Ky
Dill Kat Rahy Thy Sath Mein Aal E Rasool Ky

Ab Is Ky Bad Mir Takallum Bayan Ho Kya
Ay Pursa Daron Sochna Dill Mein Kabhi Zara

Kiun Itna Waqt Qatil E Shabbir Ko Laga
Kis Wasty Hussain Ka Kat’ta Na Tha Gala

Mehshar Mein Yeh Khuly Ga Sitam Kayenaat Par
Khanjar Ky Kuch Nishan Hain Zahra Ky Hath Par

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply