Reciter: Nadeem Sarwar

Sakina Kahani Suno Lyrics In Urdu By Nadeem Sarwar

Sakina Kahani Suno Lyrics in Urdu Text

سیاہ رات میں زنداں کے در پہ رو رو کے
سکینہ کہتی ہے بابا یہ شب ستاتی ہے
جدائی آپ کی اس پر یہ خاک کا بستر
کہیں اندھیرے میں بچوں کو نیند آتی ہے

یہ سن کے زینب مظلوم بولی غم نہ کرو
کہانی کہتی ہوں میں اک سنو سکینہ سنو

سکینہ کہانی سنو

اک ‌شہنشاہ تھا ہائے سکینہ

اک شہنشاہ تھا یثرب میں رہا کرتا تھا
اس کا گھر وہ تھا کہ قرآن جہاں اترا تھا
در پہ جبریل سا دربان رہا کرتا تھا
اس کا آنگن بھی ستاروں سے بھرا رہتا تھا
اس کے دروازے سے خالی نہ کوئی جاتا تھا
آسماں اس کی سخاوت کی قسم کھاتا تھا

اے سکینہ کہانی سنو

اس کے بابا کو در علم کہا جاتا تھا
ماں نے شہزادی کونین لقب پایا تھا
اس کے بیٹوں میں نظر عکس نبی آتا تھا
بیٹیوں کو گل پاکیزہ کہا جاتا تھا
اس کے اک بھائی کی رگ رگ میں وفا رہتی تھی
اک بہن ساتھ میں سائے کی طرح رہتی تھی

اے سکینہ کہانی سنو

ایک دن کیا ہوا ہائے سکینہ

ایک دن کیا ہوا وہ گھر سے سفر پر نکلا
اس کا سب کنبہ بھی قرآں کی حفاظت کو چلا
اشقیاء نے اسے پھر دشت بلا میں گھیرا
تین دن تک اسے پانی بھی میسر نہ ہوا
ہو گئی عام ہر اک جور و جفا اس کے لئے
اور پھر جنگ کا میدان سجا اس کے لئے

ہاں سکینہ کہانی سنو

اس کے اک بیٹے کے سینے میں سناں ٹوٹ گئی
بھائی کے ہاتھ کٹے تیر لگا مشک چھدی
لاش پامال بھتیجے کی بھی مقتل میں ہوئی
بے زباں قتل ہوا اس کا چھری اس پہ چلی
اس شہنشاہ کے کنبے پہ غریبی چھائی
بجھ گئے سارے دیے شام غریباں آئی

ہاں سکینہ کہانی سنو

خیمے جلنے لگے نزدیک ستم گر آئے
اس شہنشاہ کی بچی نے تمانچے کھائے
کان زخمی ہوئے خون آنکھوں سے ٹپکا ہائے
ڈھونڈنے باپ کو مقتل میں وہ کیسے جائے
جلتے دامن کو لئے گنج شہیداں میں گئی
رسی گردن میں بندھی شام کے زنداں میں گئی

ہائے سکینہ کہانی سنو

پھر سکینہ نے کہا ہائے سکینہ
پھر سکینہ نے کہا رہتے ہیں وہ لوگ کہاں
بولی زینب کہ ہوئے سب وہ اسیر زنداں
قصہ آخر ہوا نیند آئی نہ تم کو میری جاں
بولی رو رو کے سکینہ پھوپھی اب نیند کہاں
تم تو کہتی تھی کہانی سنو نیند آتی ہے
اس کہانی سے میری نیند اڑ جاتی ہے

ہاں سکینہ کہانی سنو

بولی رو رو کے سکینہ یہ میرا قصہ ہے
اس کہانی کا شہنشاہ میرا بابا ہے
نیزہ جس کے لگا سینے میں میرا بھیا ہے
میرا اصغر ہے لعینوں نے جسے مارا ہے
بے ردا تم ہو پھوپہی جان میری جاتی ہے
یہ کہانی تو میرے گھر کی نظر آتی ہے

ہاں سکینہ کہانی سنو

جس کو سینے پہ شہنشاہ کے نیند آتی تھی
دشت میں ہائے چچا کہہ کے جو چلاتی تھی
جس کے کانوں سے لہو بہتا تھا جو پیاسی تھی
اپنے بابا کی جدائی میں مری جاتی تھی
اس شہنشاہ کی بیٹی وہ سکینہ میں ہوں
جس کا دشوار ہوا قید میں جینا میں ہوں

ہائے سکینہ کہانی سنو

ختم جب سرور وریحان کہانی یہ ہوئی
وہ جو سنتی تھی کہانی وہ سکینہ نہ رہی
تھامے زنجیر نقاہت سے اٹھائے قیدی
ایک ننھی سی لحد کانپتے ہاتھوں سے بنی
سر شہنشاہ کا گودی میں لہو روتا تھا
وا حسینا کا بس اک شور بپا ہوتا تھا

Siyah Raat Mein Zindan Ky Dar Py Ro Ro Ky
Sakina Kehti Hai Baba Yeh Shab Satati Hai
Judai Ap Ki Us Par Yeh Khak Ka Bistar
Kahin Andhairey Mein Bachon Ko Neend Ati Hai

Yeh Sun Ky Zainab E Mazloom Boli Gham Na Karo
Kahani Kehti Hun Main Ek Suno Sakina Suno

Sakina Kahani Suno

Ek Shahenshah Tha Haye Sakina

Ek Shahenshah Tha Yasrab Mein Raha Karta Tha
Us Ka Ghar Woh Tha Ky Quran Jahan Utra Tha
Dar Py Jibreel Sa Darbaan Raha Karta Tha
Us Ka Aangan Bhi Sitaron Sy Bhara Rehta Tha
Us Ky Darwazey Sy Khali Na Koi Jata Tha
Aasman Us Ki Sakhawat Ki Qasam Khata Tha

Ay Sakina Kahani Suno

Us Ky Baba Ko Dar E Ilm Kaha Jata Tha
Maan Ny Shehzadi E Konain Laqab Paya Tha
Us Ky Baiton Mein Nazar Aks E Nabi Ata Tha
Betion Ko Gul E Pakeeza Kaha Jata Tha
Us Ky Ek Bhai Ki Rag Rag Mein Wafa Rehti Thi
Ek Behan Sath Mein Saye Ki Tarah Rehti Thi

Ay Sakina Kahani Suno

Aik Din Kya Hua Haye Sakina

Aik Din Kya Hua Woh Ghar Sy Safar Par Nikla
Us Ka Sab Kunba Bhi Quran Ki Hifazat Ko Chala
Ashqiya Ny Usy Phir Dasht E Bala Mein Ghaira
Teen Din Tak Usy Pani Bhi Muyassar Na Hua
Ho Gai Aam Har Ek Jor O Jafa Us K Liye
Aur Phir Jang Ka Maidan Saja Us K Liye

Han Sakina Kahani Suno

Us Ky Ek Bety Ky Seeney Mein Sinan Toot Gai
Bhai Ky Hath Katy Teer Laga Mashk Chidi
Lash Pamal Bhateejy Ki Bhi Maqtal Mein Hui
Bey Zaban Qatl Hua Us Ka Churi Us Py Chali
Us Shehanshah Ky Kunby Py Ghareebi Chai
Bujh Gaye Sary Diye Sham E Ghareeban Aai

Han Sakina Kahani Suno

Khaimy Jalny Lagy Nazdeek Sitam Gar Aaye
Us Shehanshah Ki Bachi Ny Tamanchay Khaye
Kaan Zakhmi Huye Khoon Ankhon Sy Tapka Haye
Dhund Baap Ko Maqtal Mein Woh Kaisy Jaye
Jalty Daman Ko Liye Ganj E Shaheedan Mein Gai
Rassi Gardan Mein Bandhi Shaam Ky Zindaan Mein Gai

Han Sakina Kahani Suno

Phir Sakina Ny Kaha Haye Sakina
Phir Sakina Ny Kaha Rehty Hen Wo Log Kahan
Boli Zainab Ky Huye Sab Woh Aseer E Zindaan
Qissa Akhir Hua Neend Ai Na Tum Ko Meri Jaan
Boli Ro Ro Ky Sakina Phuphi Ab Neend Kahan
Tum To Kehti Thi Kahani Suno Neend Ati Hai
Is Kahani Sy Meri Neend Urhi Jati Hai

Han Sakina Kahani Suno

Boli Ro Ro Ky Sakina Yeh Mera Qissa Hai
Is Kahani Ka Shahenshah Mera Baba Hai
Naiza Jis Ky Laga Seeny Mein Mera Bhaiya Hai
Mera Asghar Hai Laeenon Ny Jisy Maara Hai
Bey Rida Tum Ho Phuphi Jaan Meri Jati Hai
Yeh Kahani To Mery Ghar Ki Nazar Aati Hai

Han Sakina Kahani Suno

Jis Ko Seeney Py Shehahnshah Ky Neend Ati Thi
Dasht Mein Haye Chacha Keh Ky Jo Chillati Thi
Jis Ky Kanon Sy Lahu Behta Tha Jo Pyasi Thi
Apny Baba Ki Judai Mein Mari Jati Thi
Us Shahenshah Ki Beti Woh Sakina Main Hun
Jis Ka Dushwar Hua Qaid Mein Jeena Main Hun

Han Sakina Kahani Suno

Khatm Jab Sarwar O Rehan Kahani Yeh Hui
Woh Jo Sunti Thi Kahani Woh Sakina Na Rahi
Thamy Zanjeer Naqahat Sy Uthaye Qaidi
Aik Nanhi Si Lehad Kanpty Hathon Sy Bani
Sar Shahenshah Ka Goudi Mein Lahu Rota Tha
Wa Hussaina Ka Bas Ek Shor Bapa Hota Tha

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply