Aey Musafir Lyrics Nadeem Sarwar Noha 2015

Urdu Noha Aey Musafir Lyrics in urdu and English recited by Nadeem Sarwar on Khairilamal. Find out more noha lyrics by Nadeem Sarwar similar to lyrics of Aey Musafir on our website.

Aey Musafir Lyrics in English

Alwida Alwida Alwida
Alwida Alwida Alwida

Riwayat Hai Ky Jab Shehzadi Zainab S.a Bhai Ky Lashay Par Aai Hain.
To Bhai Ky Pamaal Badan Ko Dekh Ky Kaha.
Aa Antal Hussain,
Aa Anta Yabna Ummi O Abii,
Aa Anta Noor E Basari,
Aa Anta Mohjet E Qalbi,

Kya Tum Muhammad E Mustafa Ky Farzand Aur Ali O Fatima K Bety Ho
Aa Anta Akhi
Kya Tum Mery Bhai Ho
Kya Tum Mery Hussain Ho
Kya Tum Mery Bhai Ho

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Alwida Alwida Alwida
Alwida Alwida Alwida

Boliin Zainab Ay Meray
Maan Jaye Yeh Kya Haal Hai
Kaisy Pehchanun Tera
Laasha Bahut Paamal Hai
Aahar E Anta Akhi, Kya Hai Tu Hi Bhaia Mera
Main Musafir Sham Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Kya Tum Hi Ho Ibn E Zehra
Kya Tum Hi Ibn E Ali
Kya Tum Hi Bhai Hasan Ky
Aur Jaan E Zainabi
Ay Gul E Baagh E Muhammad
Hal Yeh Kya Ho Gya
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Na Rahi Nalain Na
Malboos Na Dastaar Hai
Ay Ghareeb E Fatima Tu
Khuld Ka Sardaar Hai
Ay Tan E Uriyan Tera To
Aaj Sab Kuch Lutt Gya
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Main Rasan Basta Chali
Waada Nibhanay K Liye
Ghar Mein Qaatil Ky Teri
Masnad Bichanay K Liye
Kal Yehi Masnad Bana Dun Gi
Teri Farsh E Aza
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Bhai Amman Aur Nana
Ka Padar Ka Waasta
Baat Kar Mujh Sy Baradar
Khol Dy Ankhen Zara
Dekh To Chehra Behan Ka
Kis Qadar Murjha Gaya
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Lasha E Bay Sar Tarhap Kar
Yeh Sada Denay Laga
Ay Behan Waada Nibha Kay
Main To Maqtal Sy Chala
Thi Sada Rehan O Sarwar
Haye Khuahar Alwida
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Aey Musafir Bay Kafan Tu
Khaak Par Waa Hasrata
Main Musafir Shaam Ki Hoon
Dushmanon Mein Bay Rida

Ay Musafir Lyrics in Urdu text

الوداع الوداع الوداع
الوداع الوداع الوداع

روایت ہے کہ جب شہزادی زینب علیہا السلام
بھائی کے لاشے پر آئی ہیں۔
تو بھائی کے پامال بدن کو دیکھ کے کہا۔
ا انت الحسین
ا انت یا بنا امی و ابی
ا انت نور بصری
ا انت مہجت قلبی

کیا تم محمد مصطفیٰ کے فرزند اور علی و فاطمہ کے بیٹے ہو
ا انت اخی
کیا تم میرے بھائی ہو
کیا تم میرے حسین ہو
کیا تم میرے بھائی ہو

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

الوداع الوداع الوداع
الوداع الوداع الوداع

بولیں زینب اے میرے
ماں جائے یہ کیا حال ہے
کیسے پہچانوں تیرا
لاشہ بہت پامال ہے
اہر انت اخی، کیا ہے تو ہی بھائیا میرا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

کیا تم ہی ہو ابن زہرا
کیا تم ہی ابن علی
کیا تم ہی بھائی حسن کے
اور جان زینبی
اے گل باغ محمد
حال یہ کیا ہو گا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

نہ رہی نعلین نہ
ملبوس نہ دستار ہے
اے غریب فاطمہ تو
خلد کا سردار ہے
اے تن عریاں تیرا تو
آج سب کچھ لٹ گیا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

میں رسن بستہ چلی
وعدہ نبھانے کے لئے
گھر میں قاتل کے تیری
مسند بچھانے کے لئے
کل یہی مسند بنا دوں گی
تیری فرش عزا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

بھائی اماں اور نانا
کا پدر کا واسطہ
بات کر مجھ سے برادر
کھول دے آنکھیں ذرا
دیکھ تو چہرا بہن کا
کس قدر مرجھا گیا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

لاشہ بے سر تڑپ کر
یہ صدا دینے لگا
اے بہن وعدہ نبھا کے
میں تو مقتل سے چلا
تھی صدا ریحان و سرور
ہائے خواہر الوداع
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

اے مسافر بے کفن تو
خاک پر وا حسرتا
میں مسافر شام کی ہوں
دشمنوں میں بے ردا

Leave a Reply

Your email address will not be published.