Reciter: Taha Mehdi

Hussain Ghareeb Shaheed Hussein Lyrics In Urdu By Taha Mehdi

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain Lyrics Urdu by Taha Mehdi

حسین حسین حسین حسین

یا حسین یا غریب یا شہید یا حسین

حسین غریب شہید حسین

حسین وہ کہ علی جن کے ناز اٹھاتے تھے
رسول سینے پہ اپنے جنہیں سلاتے تھے
کہ جبرائیل جنہیں لوریاں سناتے تھے
لباس جن کے بہشت بریں سے آتے تھے
قدم قدم پہ ستم گار انہیں ستاتے ہیں
حسین ٹھوکریں دشت بلا میں کھاتے ہیں

حسین غریب شہید حسین

حسین وہ کہ ہیں برچھی نکالی سینے سے
سمیٹے دشت میں قاسم کی لاش کے ٹکڑے
لگائے سینے سے بھائے کے دو کٹے شانے
لہو صغیر کا چہرے پہ اپنے ملتے تھے
کلیجہ یہ ہے کہ دیکھا کلیجہ اکبر کا
خلیل دیکھے ثبات قدم یہ سرور کا

حسین غریب شہید حسین

حسین پہنچے جو خیمے میں ایک آفت تھی
تھے غش میں عابد مضطر عجیب حالت تھی
بہن تھی سید مظلوم تھے وصیت تھی
چلے جو رخصت آخر کو اک قیامت تھی
سوار بڑھ کے کیا تھا بہن نے بھائی کو
تڑپ کے روئے حرم شاہ کربلائی کو

حسین غریب شہید حسین

حسین زین پہ گھوڑے کی آ کے بیٹھے تھے
زباں تھی سوکھی ہوئی زیر چشقم حلقے تھے
فرس سے رن کی طرف چلنے کو وہ کہتے تھے
فرس کی آنکھوں سے جاری لہو کے قطرے تھے
سکینہ پاؤں سے گھوڑے کے آ کے لپٹی تھی
نہ جائيے میرے بابا تڑپ کے کہتی تھی

حسین غریب شہید حسین

ملے سکینہ سے شاہ انام پل دو پل
بڑھے پھر اشکوں کا دریا لئے سوئے مقتل
تپش تھی ایسی قیامت کی جلتا تھا جنگل
چلی جو تیغ شہہ دیں تو مچ گئی ہل چل
صفوں کو اعدا کی اک تشنہ لب نے پھاڑ دیا
علی کے شیر نے کفار کو اکھاڑ دیا

حسین غریب شہید حسین

ستم شعاروں نے شہہ سے شکست کھائی ہے
صف عدو میں ہر اک سمت موت چھائی ہے
علی کے لعل کی وہ تیغ آزمائی ہے
کہ غیب سے یہ صدا شاہ دیں کی آئی ہے
میں تجھ سے راضی ہوں راضی تو مجھ سے بھی ہو جا
حسین رب کی طرف اپنے تو پلٹ کر آ

حسین غریب شہید حسین

پڑھی جو کانوں میں سرور کے غیب کی یہ پکار
تو رکھی شاہ امم نے نیام میں تلوار
وہ فوج پلٹی ہو تیروں کی ہو گئی بوچھاڑ
وہ بوسہ گاہ پیمبر وہ خنجر خوں خوار
گلہ حسین کا شمر لعیں نے کاٹا ہے
زمین سڑتی ہے خوں آسمان رویا ہے

حسین غریب شہید حسین

لعین لاشہ سرور پہ ظلم ڈھاتے تھے
سر حسین کو نیزے پہ وہ چڑھاتے تھے
یہ انتہا ہے کہ پتھر بھی مارے جاتے تھے
بتول روتی تھی اور وہ خوشی مناتے تھے
عجیب سوگ میں توقیر کل خدائی ہے
جلے تھے خیمے غریبوں کی شام آئی ہے

حسین غریب شہید حسین

Hussain Hussain Hussain Hussain

Ya Hussain Ya Ghareeb Ya Shaheed Ya Hussain

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Hussain Woh Ky Ali Jinn Ky Naaz Uthaty Thy
Rasool Seeny Py Apny Jinhen Sulaty Thy
Ky Jibraeel Jinhen Lorian Sunaty Thy
Libas Jin Ky Bahisht E Bareen Sy Aaty Thy
Qadam Qadam Py Sitamgar Inhen Sataty Hain
Hussain Thokaren Dasht E Bala Mein Khaty Hain

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Hussain Woh Ky Hain Barchi Nikali Seeny Sy
Samaity Dasht Mein Qasim Ki Lash Ky Tukry
Lagaye Seeny Sy Bhai Ky Do Katy Shaney
Lahu Sagheer Ka Chehry Py Apny Malty Thy
Kalaija Yeh Hai Ky Dekha Kalaija Akbar Ka
Khaleel Dekhy Sabaat E Qadam Yeh Sarwar Ka

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Hussain Pahunchy Jo Khaimey Mein Aik Aafat Thi
Thy Ghash Mein Abid E Muztar Ajeeb Halat Thi
Behan Thi Syed E Mazloom Thy Wasiyat Thi
Chaly Jo Rukhsat E Akhir Ko Ek Qayamat Thi
Sawar Barh Ky Kiya Tha Behan Ny Bhai Ko
Tarhap Ky Roye Haram Shah E Karbalai Ko

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Hussain Zeen Py Ghorhy Ki Aa Ky Bethy Thy
Zuban Thi Sookhi Hui Zair E Chashm Halky Thy
Faras Sy Ran Ki Taraf Chalny Ko Woh Kehty Thy
Faras Ki Aankhon Sy Jari Lahu Ky Qatry Thy
Sakina Paon Sy Ghorhy Ky Aa Ky Lipti Thi
Na Jaiye Mery Baba Tarhap Ky Kehti Thi

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Mily Sakina Sy Shah E Anaam Pal Do Pal
Barhy Phir Ashkon Ka Dariya Liye Sooye Maqtal
Tapish Thi Aisi Qayamat Ki Jalta Tha Jangal
Chali Jo Taigh E Shah E Deen To Mach Gai Hal Chal
Safon Ko Aada Ki Ek Tashna Lab Ny Ukharh Diya
Ali Ky Shair Ny Kuffar Ko Ukharh Diya

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Sitam Shayaron Ny Sheh Sy Shikast Khai Hai
Saf E Adoo Mein Har Ek Maot Chai Hai
Ali Ky Laal Ki Woh Taigh Aazmai Hai
Ky Ghaib Sy Sada Shah E Deen Ki Aai Hai
Main Tujh Sy Razi Hun Razi Tu Mujh Sy Bhi Ho Ja
Hussain Rab Ki Taraf Apny Tu Palat Kar Aa

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Parhi Jo Kanon Mein Sarwar Ky Ghaib Ki Yeh Pukaar
To Rakhi Shah E Umam Ny Nayaam Mein Talwaar
Woh Faoj Palti Woh Teeron Ki Ho Gai Bocharh
Woh Bosa Gah E Payambar Woh Khanjar E Khoon Khuwar
Gala Hussain Ka Shimr E Laeen Ny Kaata Hai
Zameen Sarhti Hai Khoon Asman Roya Hai

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Laeen Lasha E Sarwar Py Zulm Dhaty Thy
Sar E Hussain Ko Naizey Py Woh Charhaty Thy
Yeh Intiha Hai Ky Pathar Bhi Maary Jaty Thy
Batool Roti Thi Aur Woh Khushi Manaty Thy
Ajeeb Soag Mein Tauqeer Kul Khudai Thi
Jaly Thy Khaimy Ghareebon Ki Shaam Ai Thi

Hussain Ghareeb Shaheed Hussain

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply