Reciter: Mir Hasan Mir

Utho Sakina Chalein Karbala Lyrics In Urdu By Mir Hasan Mir

سکینہ سکینہ سکینہ سکینہ

زنداں سے جب رہا ہوئے سادات کربلا
ماں نے لپٹ کے قبر سکینہ پہ دی صدا

اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

چھوٹی سی تربت پہ ماں نے کہا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

زنداں سے جاتا ہے اب قافلہ
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

مجھے شہزادی تمھاری قسم
نہ رکھوں گی زنداں سے باہر قدم
سفر کی اب ہوتی ہیں تیاریاں
عماری میں بیٹھے ہیں اہل حرم
غربت کا میری تمہیں واسطہ
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

وہ پہلے کے جیسی تو غربت نہیں
اے بی بی ہماری وہ حالت نہیں
تمہیں شامیوں سے اب اے میری جاں
کفن مانگنے کی ضرورت نہیں
لو مل گئی ہے تمھاری ردا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

مجھے یاٹ اصغر کی ہے بے کسی
لحد سے وہ میت نکالی گئی
اکیلے میں رہنے نہ دوں گی تمہیں
بھروسہ نہیں شامیوں کا کوئی
رہتے ہیں چاروں طرف اشقیا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

یہ شامی کہاں تم کو بہلائیں گے
تمہاری لحد پر نہیں آئیں گے
رہے گا اندھیرا یہ زندان میں
حرم جب یہاں سے چلے جائیں گے
کون آئے گا پھر جلانے دیا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

کہانی پدر کی سناؤں گی میں
اگر نیند آئی سناؤں گی میں
اکیلے نہ ناقے پہ بیٹھو گی تم
تمہیں ساتھ اپنے بٹھاؤں گی میں
اب تو رسن میں نہ ہو گا گلہ
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

مجھے مار ڈالے گا بس یہی غم
کمر میں ہے بیٹی تمہاری جو خم
ورم بازوؤں کا مجھے یاد ہے
تمہیں تو دکھائی بھی دیتا ہے کم
اکبر سے بی بی ملے گی شفا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

بڑی دیر ٹھہری ہیں دربار میں
یہاں پر نہ روکو زیادہ انہیں
کہ پہلو پہ ایک ہاتھ رکھے ہوئے
صدا دے رہی ہیں سکینہ تمہیں
لینے کو آئی ہیں خود سیدہ
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

تھی زنداں میں اکبر عجب وہ گھڑی
رہائی پہ روتی تھی ہر اک پھوپھی
ادھر خون روتا تھا عابد ادھر
سکینہ لحد میں تزپتی رہی
جب بھی یہ مادر نے رو کر کہا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا
اٹھو سکینہ چلیں کربلا

Sakina Sakina Sakina Sakina

Zindaan Sy Jab Rihaa Huye Sadaat E Karbala
Maan Ny Libat Ky Qabar E Sakina Py Di Sadaa

Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Choti Si Turbat Py Maan Ny Kaha
Utho Sakina Chalein Karbala
Utho Sakina Chalein Karbala

Zindaan Sy Jata Hai Ab Qaafla
Utho Sakina Chalein Karbala

Mujhy Shahzadi Tumhari Qasam
Na Rakhun Gi Zindaan Sy Baahir Qadam
Safar Ki Ab Hoti Hain Tiyarain
Amari Mein Baithey Hain Ahl E Haram
Ghurbat Ka Meri Tmhen Waasta
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Wo Pehly K Jaisi To Ghurbat Nahi
Ay Bibi Hamari Wo Haalat Nahi
Tumhen Shaamion Sy Ab Ay Meri Jaan
Kafan Mangnay Ki Zaroorat Nahi
Lo Mil Gai Hai Tumhari Rida
Utho Sakina Chalein Karbala
Utho Sakina Chalein Karbala

Mujhy Yaad Asghar Ki Hai Bay Kasi
Lahad Sy Wo Mayaat Nikali Gai
Akely Main Rehny Na Doon Gi Tumhen
Bharossa Nahi Shaamion Ka Koi
Rehtay Hain Chaaron Taraf Ashqiya
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Yeh Shaami Kahan Tum Ko Behlayen Gay
Tumhari Lahad Par Nahi Aayen Gay
Rahay Ga Andhera Yeh Zindaan Mein
Haram Jab Yahan Sy Chaly Jayen Gay
Kon Aye Ga Phir Jalany Diya
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Kahani Padar Ki Sunaon Gi Main
Agar Neend Aai Sunaon Gi Main
Akelay Na Naaqay Py Baitho Gi Tum
Tumhen Saath Apny Bithaoon Gi Main
Ab To Rasan Mein Na Ho Ga Gala
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Mujhy Maar Daly Ga Bas Yehi Ghum
Qamar Mein Hai Beti Tumhari Jo Khum
Waram Bazoo’on Ka Mujhy Yaad Hai
Tumhen To Dikhai Bhi Deta Hai Kamm
Akbar Sy Bibi Mily Gi Shifa
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Bari Dair Thehri Hain Darbaar Mein
Yahan Par Na Roko Ziyada Unhen
Kay Pehloo Py Aik Hath Rakhy Huye
Sadaa Dy Rahi Hain Sakina Tumhen
Lenay Ko Aai Hain Khud Sayeda
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Thi Zindaan Mein Akbar Ajab Woh Gharhi
Rihaai Py Roti Thi Har Ik Phuphi
Idhar Khoon Rota Tha Abid Udhar
Sakina Lahad Mein Tarapti Rahi
Jab Bhi Yeh Maadar Ny Ro Kar Kaha
Utho Sakina Chalen Karbala
Utho Sakina Chalen Karbala

Choti Si Turbat Py Maan Ny Kaha
Utho Sakina Chalen Karbala

Sakina Sakina Sakina Sakina

Join Khairilamal on WhatsApp

WhatsApp

Leave a Reply